Get Even More Visitors To Your Blog, Upgrade To A Business Listing >>

Qarz e nigah e yar ada kar chuke hai ham

قرضِ نگاہِ یار ادا کرچکے ہیں ہم

قرضِ نگاہِ یار ادا کرچکے ہیں ہم
سب کچھ نثار راہِ وفا کرچکے ہیں ہم
کچھ امتحانِ دستِ جفا کرچکے ہیں ہم
کچھ ان کی دسترس کا پتا کرچکے ہیں ہم
اب احتیاط کی کوئی صورت نہیں رہی
قاتل سے رسم و راہ سوا کرچکے ہیں ہم
دیکھیں ہے کون کون ، ضرورت نہیں رہی
کُوئے ستم میں سب کو خفا کرچکے ہیں ہم
اب اپنا اختیار ہے چاہیں جہاں چلیں
رہبر سے اپنی راہ جدا کرچکے ہیں ہم
ان کی نظر میں، کیا کریں، پھیکا ہے اب بھی رنگ
جتنا لہو تھا صرفِ قبا کرچکے  ہیں  ہم
کچھ اپنے دل کی خُو کا بھی شکرانہ چاہئے
سو بار ان کی خُو کا گلا کرچکے ہیں ہم
              فیض احمد  فیضؔ




This post first appeared on Urdu Poetry Collection, please read the originial post: here

Share the post

Qarz e nigah e yar ada kar chuke hai ham

×

Subscribe to Urdu Poetry Collection

Get updates delivered right to your inbox!

Thank you for your subscription

×