Get Even More Visitors To Your Blog, Upgrade To A Business Listing >>

Yad- Dasht e tanhai main ay jan e jahan larzan hain

Faiz Ahmed Faiz

       یاد   (دستِ صبا- فیض احمد فیض)

دشتِ تنہائی میں، اے جانِ جہاں ، لرزاں ہیں
تیری آواز کے سائے ترے ہونٹوں کے سراب
دشتِ تنہائی میں، دُوری کے خس و خاک تلے
کھل رہے ہیں، ترے پہلو کے سمن اور گلاب

اٹھ رہی ہے کہیں قربت سے تری سانس کی آنچ
اپنی   خوشبو   میں   سُلگتی   ہوئی   مدھم   مدھم
دو   افق   پار    ،   چمکتی   ہوئی   قطرہ   قطرہ
گر   رہی   ہے    تری   دلدار   نظر   کی   شبنم

اس قدر پیار سے ، اے جانِ جہاں ، رکھا ہے
دل کے رخسار پہ اس وقت تری یاد مے ہات
یوں گماں ہوتا ہے ، گرچہ ہے ابھی صبحِ فراق
ڈھل گیا ہجر کا دن ، آ بھی گئی وصل کی رات




This post first appeared on Urdu Poetry Collection, please read the originial post: here

Share the post

Yad- Dasht e tanhai main ay jan e jahan larzan hain

×

Subscribe to Urdu Poetry Collection

Get updates delivered right to your inbox!

Thank you for your subscription

×