Get Even More Visitors To Your Blog, Upgrade To A Business Listing >>

Is tarah sath nibhna hai dushwaar sa

اس طرح ساتھ نبھنا ہے دشوار سا

اس طرح ساتھ نبھنا ہے دشوار سا
تو بھی تلوار سا ، میں بھی تلوار سا
اپنا رنگِ غزل، اس کے رخسار سا
دل چمکنے   لگا  ہے   رُخِ   یار سا
اب ہے ٹوٹا سا دل خود سے بیزار سا
اس حویلی میں لگتا ہے دربار سا
خوب صورت سی پیروں میں زنجیر ہو
گھر میں بیٹھا رہوں میں گرفتار سا
میں فرشتوں کی صحبت کے لائق نہیں
ہم سفر کوئی   ہوتا   گنہگار   سا
گڑیا ، گڈے کو بیچا ، خریدا گیا
گھر سجایا  گیا   رات  بازار   سا
شام تک کتنے ہاتھوں سے گزروں گا میں
چائے خانے میں اُردو کے اخبار سا
بات کیا ہے کہ مشہور لوگوں کے گھر
موت کا سوگ ہوتا ہے تیوہار سا
زینہ زینہ اُترتا    ہوا   آئینہ
اس  کا  لہجہ   انوکھا  کھنک  دار  سا
             بشیر ؔبدر




This post first appeared on Urdu Poetry Collection, please read the originial post: here

Share the post

Is tarah sath nibhna hai dushwaar sa

×

Subscribe to Urdu Poetry Collection

Get updates delivered right to your inbox!

Thank you for your subscription

×