Get Even More Visitors To Your Blog, Upgrade To A Business Listing >>

kya batain fasale bekhawabi

کیا بتائیں فصلِ بے خوابی یہاں بوتا ہے کون
کیا بتائیں فصلِ بے خوابی یہاں بوتا ہے کون
جب درودیوار جلتے ہوں تو پھر سوتا ہے کون
تم تو کہتے تھے کہ سب قیدی رہائی پا گئے
پھر پسِ دیوار زنداں رات بھر روتا ہے کون
بس تری بے چارگی ہم سے نہیں دیکھی گئی
ورنہ ہاتھ آئی ہوئی دولت کو یوں کھوتا ہے کون
کون یہ پاتال سے لے کر ابھرتا ہے مجھے
اتنی تہہ داری سے مجھ پر منکشف ہوتا ہے کون
کوئی  بے ترتیبئ  کردار  کی  حد  ہے سلیمؔ
داستاں کس کی ہے زیبِ داستاں ہوتا ہے کون
                       سلیم کوؔثر


This post first appeared on Urdu Poetry Collection, please read the originial post: here

Share the post

kya batain fasale bekhawabi

×

Subscribe to Urdu Poetry Collection

Get updates delivered right to your inbox!

Thank you for your subscription

×